سندھ ہائی کوررٹ نے اسٹیل ملز ملازمین کی جبری برطرفی و پرائویٹائزیشن پر اسٹے آڈر جاری کردیا۔

0
829

کراچی: سندھ ہائیکورٹ نے پاکستان اسٹیل کے ملازمین کی برطرفیوں کے ای سی سی کے فیصلے کے خلاف اسٹے آرڈر جاری کر دیا۔

سندھ ہائی کورٹ نے 3 جون 2020 کو ای سی سی سے منظور شدہ پی ایس ایم 9،350 ملازمین کی ریٹرنمنٹ کے خلاف 15 جون 2020 میں اسٹینڈ آرڈر کی منظوری دی ، 9 جون 2020 کو کابینہ نے اس کی توثیق کی تھی۔

قانونی نکتہ نگاہ سے نمبر1

اعلان کریں کہ پی ایس ایم کے 9،350 ملازمین کی برطرفی ، برطرفی ، برطرفی اور برطرفی غیرقانونی ، کالعدم ہے اور اس عدالت کے ذریعہ مارا جانے والے بنیادی حق کی خلاف ورزی ہے۔

حکم کے مطابق یہ نکتہ عطا کیا گیا ہے یا اجازت دی گئی ہے جس کا مطلب ہے کہ نماز کے اس حصے کے مطابق ہی رہنا ہے

نکتہ نگاہ نمبر 2

اعلان کریں کہ جواب دہندگان نمبر 1 کے ذریعہ شروع کردہ نجکاری اختیارات پارٹی کی 2006 کی درخواست میں سپریم کورٹ کے فیصلے کے ذریعے اعلان کردہ اصولوں، غیر قانونی، بد عنوانی اور خلاف ورزی کے بغیر ہے۔

نماز کے اس مقام کو بھی صرف مستثنیات کے ساتھ عطا کیا گیا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ قیام پر نجکاری بھی عطا کردی گئی ہے۔

اس میں 3 اور 4 مقام پرعدالت کا کہنا ہے کہ پی ایس ایم ملازمین کی برطرفی کی خبر پریس میں شائع ہوئی ہے اور اسے شبہ ہے کہ عدالت عظمی نے پہلے ہی اس معاملے کا نوٹس / نوٹس لیا ہے۔ اٹارنی جنرل آف پاکستان کو وضاحت کے لئے نوٹسز جاری کردیئے گئے ہیں اگر ایسا ہے تو ہم اس معاملے پر مزید کارروائی کریں گے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں