پٹواریوں سے متعلق لاہور ہائیکورٹ کا بڑا تحریری فیصلہ جاری

0
77

لاہور: لاہور ہائیکورٹ نے لاہور سمیت پنجاب کے پٹواریوں سے متعلق بڑا تحریری فیصلہ جاری کردیا ہے۔ لاہور ہائیکورٹ نے فیصلے میں پنجاب بھر کے پٹواریوں کو پرائیویٹ بلڈنگ سے فوری سرکاری بلڈنگ میں منتقل کرنے کا حکم دیدیا ہے۔ عدالت نے پٹواریوں کے ساتھ پرائیویٹ افراد رکھنے سے سختی سے روک دیا اور پرائیویٹ افراد رکھنے والے پٹواریوں کے خلاف ڈی جی اینٹی کرپشن  مقدمات درج کرے۔

ہمیں یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ شفافیت، خداری اور کرپشن کے خلاف مزاخمت کو اپنے کلچر کا حصہ بنا کر ہی دنیا کی نظر میں پاکستان کے امیج کو بہتر بنایا جاسکتا ہے۔ انتہائی دکھ کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ ایسے کیسز کی وجہ سے ہی پاکستان کرپشن کے حوالے ٹاپ ممالک میں ہے۔

 عدالت نے سیینر ممبر بورڈ آف ریونیو کو حکم دیتے ہوئے فیصلہ دیا کہ آیندہ کسی پرائیویٹ شحص کو ریونیو سرکل میں کام کی اجازت نہ دی جائے۔ مستقبل میں اگر کوئی پٹواری ملوث پایا گیا تو ڈی جی اینٹی کرپشن اس کے خلاف کارروائی کریں۔ پٹواری کے ساتھ پرائیویٹ بندے بٹھانے میں اگر اسسٹنٹ کمشنر، ڈی سی سمیت کوئی بھی افسر ملوث ہے تو ڈی جی اینٹی کرپشن کاروائی کریں۔ اس کیس میں سئننر بورڈ آف ریونیو اور اسٹنٹ کلکٹر اور ڈپٹی کلکٹر اور کمشنر بہاولپور کو نوٹس جاری کیے گئے۔ تمام افسران سے وضاحت طلب کی گئی کہ وہ اعلی عدالتوں کے فیصلوں پر عمل کیوں نہ کرسکے لیکن تمام افسران کے پاس بولنے کو کچھ نہیں تھا۔

فیصلے میں مذید کہا کہ سیننر بورڈ آف ریونیو نے وضاحت دی کہ تمام غیر قانونی اقدام کی وجہ سٹاف کی کمی تھی۔ سینئر بورڈ آف ریونیو کی اس وضاحت کو مسترد کیا گیا اور کہا کہ عدالت کی نظر میں سئنیر بورڈ آف ریونیو کو بہانے بنانے کی بجائے نئی بھرتی کرنے کی طرف جانا چاہیے تھا۔ پٹواڑی کی جانب سے پرائیویٹ بلڈنگ میں قائم کیاگیا سرکاری بلڈنگ میں منتقل کیا جائے۔

لاہور ہائیکورٹ جسٹس چوہدری عبد العزیز نے چھ صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ جاری کرتے ہوئے عدالت نے پٹواری رفیق احمد کی درخواست ضمانت میں حکم نامہ جاری کیا۔ عدالت نے پٹواری رفیق احمد کی درخواست ضمانت دو لاکھ روپے مچلکوں کے عوض منظور کرلی اور پٹواری رفیق احمد کے خلاف محمد اظہر نامی شہری نے رشوت دینے کا مقدمہ درج کروایا۔ محمد اظہر نے زمین کی فرد کے لیے پٹواری سے رابطہ کیا تو بطور رشوت 30 ہزار روپے مانگے گے۔ شہری نے 30 ہزار روپے رشوت کا دینے کے بعد اے سی ای بہاولپور کو شکایت کی۔ اے سی ای نے اینٹی کرپشن میں پٹواری رفیق احمد کے خلاف مقدمہ درج کروایا۔ درخواست گزار کے مطابق شہری نے ذاتی رنجش میں مقدمہ درج کروایا اور محمد اظہر کا غیر قانونی کام نہ کرنے پر مقدمہ بنایا گیا۔ شہری پٹواری کے خلاف موقع کے گواہ دینے میں ناکام رہا ہے اور شہری کے پاس پٹواری کے خلاف رشوت دینے کے ٹھوس شوائد نہ ہیں۔ عدالت پٹواری رفیق احمد کی درخواست ضمانت بعد ازگرفتاری منظور کرتی ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں