مسیحی مشینری کا تعلیمی اداروں میں بنیادی کردار

0
298

تحریر: انمول شیراز

نوٹ: پشاورکی صحافی ہیں مختلف اخبارات میں لکھتی رہتی ہیں، برطانیہ میں مقیم کارپوریٹ سیکٹر میں کوآرڈینیٹر، ہیڈ مشمول مصنف کی حیثیت سے بھی کام سرانجام دے رہی ہیں اور انہیں خواتین کے حقوق، اقلیتوں کے معاملات کو قلم بند کرنے کے لئے بھی جانا جاتا ہے

پاکستان نہ صرف مسلمان بلکہ مسیحیوں کی جدوجہد کے ساتھ بھی وجود میں آیا، یہاں ایک ایسی سرزمین حاصل کرنے کے لئے جہاں ہر شخص مذہب سے قطع نظر اپنے حقوق استعمال کرسکے۔ مسیحی پاکستان کی دو سب سے بڑی مذہبی اقلیتوں میں سے ایک ہیں جن میں ہندو ہیں۔ 2020 میں تخمینے کے مطابق پاکستان میں مسیحیوں کی تعداد 4 ملین ہے۔ کے پی کے میں صرف مسیحی اقلیتوں کی تعداد 0.21 فیصد ہے۔ ان میں سے تقریبا نصف پروٹسٹنٹ اور آدھے کیتھولک ہیں جبکہ آرتھوڈوکس مسیح کا ایک چھوٹا حصہ بھی یہاں رہتا ہے۔ بہت کم تعداد میں ہونے کے باوجود مسیحی اقلیت نے ملک کی خواندگی کی شرح کو بڑھانے کے لئے مشنری تعلیمی ادارے قائم کرکے ملک کے لئے بہت کچھ کیا ہے۔

عیسائیت کی ابتدا ٹیکسلا کے ذریعہ پاکستان میں پہلی صدی عیسوی میں رسول تھامس کی آمد کے ساتھ ہوئی۔ وقت کے ساتھ ساتھ نوآبادیاتی عہد میں پندرہویں صدی میں مغربی تجارتی سامراج کے ایک حصے کے طور پر یہ عقیدہ وسیع ہوا۔ اسی وجہ سے موجودہ گرجا گھر زیادہ تر رومن کیتھولک اور پروٹسٹنٹ میں تقسیم ہیں۔ رومن کیتھولک مشنری نے 16 ویں صدی میں پرتگالیوں کی آمد کے ساتھ ترقی کی اور کیتھولک نے 1570 میں لاہور میں اپنے آپ کو قائم کیا۔ مسیحیوں کو جدید دور میں پہچانے جانے کا سہرا 18 اور 19 ویں صدی کے آخر میں پروٹسٹنٹ مشنری کے ذریعہ خواندگی کو فروغ دینے کے لئے جاتا ہے۔ اس کے بعد سے عیسائی برادری کو لانے کی کوششوں میں اضافہ ہوا ہے۔ تقسیم ہند سے قبل مسیحی مشنریوں نے صحت اور تعلیمی اداروں کا ایک اچھا نامور نیٹ ورک قائم کیا تھا جو اب تک موجود ہے۔ 1971کی تقسیم سے پہلے مسیحی مشنریوں نے اپنی برادری کو بلند کرنے کے لئے کام کیا۔

مسیحی برادری کے تعلیمی اداروں میں سینٹ جوزف کانونٹ، کانوینٹ آف جیسس اینڈ مریم، سینٹ پیٹرک ہائی اسکول، سینٹ مائیکلز ہائی اسکول، پریزنٹیشن کانونٹ ہائی اسکول، سینٹ میریز ہائی اسکول اور سینٹ جان کیتھیڈرل جیسے قیام کی کاوشیں ہیں۔ اسکولوں میں سینٹ ڈینی ہائی اسکول، سینٹ فرانسس ہائی اسکول، ایڈورڈیز اسکول اور ایڈورڈیز کالج شامل ہیں۔ اعلی تعلیم کا تصور فارمین کرسچن کالج کے قیام سے طے ہوا تھا۔ مرے کالج، لارنس کالج، گورڈن کالج اور کناارد کالج (پہلی بار خواتین پر مبنی کالج) تھا۔

مسیحیوں کے قائم کردہ بہت سارے اسکولوں، کالجوں اور یونیورسٹیوں میں سے یہ چند ہیں جو پچھلے 160 سالوں سے پاکستان میں کامیابی کے ساتھ لوگوں کو تعلیم دے رہے ہیں۔ ان مشینری تعلیمی اداروں نے زندگی کی شکل اختیار کرلی ہے جس کے نتیجے میں ملک قدیم اور مستقبل پیچیدہ ہوگیا ہے۔ عیسائیوں نے ملک کے تمام بڑے حصوں میں بڑے بڑے کلاس رومز، کھیل کے میدانوں، عام کمرے اور کبھی کبھار تیراکی کے تالابوں سے اسکولوں اور کالجوں کی تعمیر کی ہے۔

مشینری تعلیمی اداروں نے خواتین کو بااختیار بنانے کی حمایت کی جو ان کی تشکیل سے ہی عیاں ہے۔ خواتین کی تعلیم کو فروغ دینے کے لئے پورے ملک میں گرلز اسکول قائم کیے گئے ہیں۔ یہ ادارے اب بھی مسیحی چرچوں کے موثر انتظام کے تحت چل رہے ہیں۔ ماہر تعلیم، رہنماؤں، کھلاڑیوں، شاعروں، سائنس دانوں، وکلاء اور نئی نسل کی تیاری اور تعلیم دیتے ہیں۔ ان اداروں کی ایک سب سے اہم خوبی یہ تھی کہ وہ آج بھی جو تعلیم پیش کررہے ہیں وہ اس غیر معمولی اور غیر متوقع معیار کی تعلیم تھی۔ جس میں بتایا گیا ہے کہ ان اسکولوں اور کالجوں نے کیوں مشہور دانشوروں کو جنم دیا ہے۔

پاکستان میں 1956 سے لے کر اب تک تقریبا تمام وزرائے اعظم نے اپنی تعلیم ایک مشینری تعلیمی انسٹی ٹیوٹ سے حاصل کی ہے۔ پاکستان کے 13 صدور مملکت میں سے 6 نے انہی مشنری اسکول یا کالج سے اپنی تعلیم حاصل کی۔ ان میں ذوالفقارعلی بھٹو، پرویز مشرف، پرویز رشید، پرویز خٹک، ملیحہ لودھی، بینظیربھٹو، شیری رحمان، شرمین عبید چنائے، شہباز شریف، نواز شریف، اسحاق ڈار، نجم سیٹھی، سلمان تاثیر اور سردار ایاز صادق جیسے لوگ تیارکیے ہیں۔ علامہ اقبال اور فیض احمد فیض کو فراموش نہیں کریں گے۔ مشینری اسکول اور کالج میں عزت و وقار کی مجلس منعقد کی گئی تھی اور انھیں پاکستان میں بہت سے قابل ذکر بیوروکریٹس، قائدین، ​​ججوں اور دانشوروں کو پیدا کرنے کی تائید حاصل ہے۔ بھٹو دور حکومت میں مشنری اسکولوں کو قومیانے نے عیسائی برادری میں تعلیم کی کمر توڑ دی۔ تاہم آج بھی کنوینٹ یا کیتیڈرل اور دیگر مسیحی ادارے ملک میں تعلیم کے لئے سب سے اعزازی مراکز ہیں جہاں ان میں سے بیشتر ملکیت اور مذہبی جماعتوں کے زیر انتظام ہیں۔

مسیحیوں کو تعلیم کی پیش کش کے باوجود عیسائی خود ہی صحیح تعلیم سے محروم ہیں۔ عیسائی طلباء کے ساتھ بدتمیزی برتی جاتی ہے اور بعض اوقات ان کے داخلے میں صرف ان کے مذہب کی وجہ سے کمی آتی تھی۔ اس معاشرے کی تعلیم میں عیسائی برادری کے تعاون کو نظرانداز کیا گیا ہے۔ جبکہ مسلم طلبہ آسانی سے کسی بھی عیسائی تعلیمی انسٹی ٹیوٹ میں داخلہ لے سکتے ہیں۔ مسیحی طلبا ایسے تعلیمی اداروں تک رسائی حاصل نہیں کرسکتے ہیں جو صرف ان کی تعلیم کے لئے بنائے گئے تھے کیونکہ اسکول میں 1 فیصد سے کم عیسائی طلبا ہیں۔

حکومت مسیحیوں کو سول سروسز میں ایگزیکٹو عہدوں پر بھی تسلیم نہیں کرتی ہے اور عیسائی وزرا ملک کی مرکزی سیاست میں حصہ نہیں لے سکتے ہیں۔ ملک کے آئین کے آرٹیکل 41 (2) اور آرٹیکل 91 (3) کسی غیر مسلم کو وزیر اعظم اور صدر پاکستان کے عہدوں پر بھی قبضہ کرنے کی اجازت نہیں دیتا ہے۔

تعلیم سے متعلق تنازعات کو حل کرنے کے لئے سب سے اہم کوشش یہ ہو سکتی ہے کہ ایک متوازن سیٹ متعارف کرایا جائے۔  بلاشبہ کسی بھی معاشرتی یا مذہبی منافرت سے پاک ہو۔ کیونکہ بہت سے مسیحی والدین اپنے بچوں کو عیسائی مذہبی تعلیم اور فیس وصول کرنے سے ہچکچاتے ہیں جو وہ برداشت نہیں کرسکتے ہیں۔ جبکہ حقیقت یہ ہے کہ اعلی عہدیدار یا اشرافیہ کے افراد اپنی اولاد کو ان اسکولوں میں بھیج سکتے ہیں۔ مسیحی اقلیت کو بااختیار بنانے کی طرف ایک اور قدم سیاسی شمولیت اور انتخاب کی اصلاحاتی انتخاب ہے نہ کہ انتخاب۔

اہم کردار گرجا گھروں اور چرچوں کا ہے کہ وہ آگے آئیں اور معاشرے کی ترقی کے منصوبوں کا جال بچھا کر اور انتہائی مستحق اور پسماندہ بچوں کو مفت تعلیم کا نظام فراہم کرکے ایک اہم اسٹیک ہولڈر کی حیثیت سے اپنا کردار ادا کریں۔ ایسا کرنے سے چرچ حکومت کے ذریعہ معاشرے کی ترقی کے لئے دانستہ حکمت عملیوں کو متاثر کرے گا۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں