وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے جانوں کے تحفظ کے لئے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی اپیل کردی

0
59

وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے لوگوں سے اپنی زندگی اور دوسروں کی جانوں کے تحفظ کے لئے کوڈ 19 کے خلاف احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی اپیل کی ہے۔

اسلام آباد: وزیر منصوبہ بندی اسد عمرکہا کہ ہماری پہلی اور اہم ترجیح کورونا وبائی امراض کے پھیلاؤ کی رفتار کو تیز کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس حکمت عملی کے دو انتہائی اہم اجزاء طبی برادری کے مشورے سے احتیاطی تدابیر پر عمل پیرا ہونا اور ہمارے طرز زندگی میں تبدیلی لانا ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وہ لوگ جو احتیاطی تدابیر اختیار نہیں کر رہے ہیں وہ نہ صرف اپنی جانوں کا خطرہ مول رہے ہیں بلکہ دوسروں کی بھی زندگیوں کو خطرے میں ڈال رہے ہیں جن سے وہ رابطہ کرتے ہیں۔

اسد عمر نے کہا کہ ملک بھر میں ضلعی انتظامیہ کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ سخت کارروائی کریں جہاں لوگ قواعد اور ایس او پیز کو پامال کرتے ہیں۔ وزیر منصوبہ بندی کا بنیادی مقصد پاکستان میں 210 ملین افراد کی جانوں کا تحفظ کرنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت ہر ایک کی روزی روٹی کمانے میں مدد کرنا چاہتی ہے ، لیکن دوسروں کی صحت کو خطرے کی قیمت پر نہیں۔ انہوں نے کہا کہ کسی کو بھی دوسروں کی زندگی کو خطرے میں ڈالنے کی اجازت نہیں دی جاسکتی ہے۔

وزیر موصوف نے کہا کہ پاکستان کے 884 علاقوں میں زبردستی لاک ڈاؤن کی کاروائیاں کی جارہی ہیں جبکہ پابندی کی وجہ سے 200،000 سے زائد افراد متاثر ہوئے ہیں۔

اسد عمر نے کہا کہ حکومت کی دوسری ترجیح لوگوں کے لئے صحت کی خدمات کو بہتر بنانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹیسٹنگ سسٹم کو بہتر بنانے کے لئے کام کیا گیا ہے اور اب روزانہ 22،000 سے زیادہ ٹیسٹ لئے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 26 فروری کو جب پہلا معاملہ سامنے آیا تو وہاں صرف 8 لیبارٹریاں تھیں جو ملک میں لوگوں کو جانچنے کے قابل تھیں۔ اب ، یہ تعداد بڑھ کر درجنوں ہو گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں وینٹیلیٹروں کی تعداد میں چار مہینوں میں دو گنا اضافہ دیکھا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس کے علاوہ ملک کے سائنسی اداروں نے نجی شعبے کے ساتھ مل کر چہرے کے ماسک اور حفاظتی لباس تیار کرنا شروع کردیئے ہیں۔

اسد عمر نے فرنٹ لائن میڈیکل اسٹاف کی خدمات کو زبردست خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ حکومت صحت کے لئے ہر ممکن اقدامات اٹھا رہی ہے تاکہ وہ اپنے فرائض کی انجام دہی کر سکے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں