ہائی کورٹ میں لمز یونیورسٹی کے پروفیسر کے جنسی  زیادتی کا معاملہ

0
375

لاہور: لاہور ہائی کورٹ میں لمز یونیورسٹی کے پروفیسر کے جنسی زیادتی کا معاملہ۔ عدالت نے درخواست پر صوبائی محتسب اور لمز یونیورسٹی کو نوٹس جاری کرتے ہوئے دو ہفتوں میں جواب طلب کر لیا۔

عدالت نے پروفیسر ڈاکٹر جاوید سرور نقوی کو بھی طلبی  کے نوٹس جاری کر دیے کہ وہ خود یا وکیل کے ذریعے اپنا موقف پیش کریں۔ مسٹر جسٹس شاہد وحید نے میمونہ طارق کی درخواست پر سماعت کی۔

درخواستگزار نے کہا جسٹس کے روبرو کہا یہ اس نے پروفیسر ڈاکٹر جاوید سرور نقوی کی نگرانی میں  پی ایچ ڈی کی۔ مذکورہ پروفیسر  نے کانفرنس میں مہمان خصوصی بلا کر اس کو زیادتی کا نشانہ بنایا ہے۔ لمز کی اعلی سطع کمیٹی نے اسکی درخواست پر انکوائری کی اور لمز کمیٹی نے پروفیسر ڈاکٹر جاوید سرور نقوی کو قصور وار ٹھہرایا۔ پروفیسر نے اس فیصلے کے خلاف صوبائی محتسب سے رجوع کیا۔ صوبائی محتسب نے لمز کمیٹی کا فیصلہ  کالعدم قرار دے دیا۔

صوبائی محتسب کے فیصلہ میں زیادتی کا وقوعہ ملک سے باہر ہوا اور اس میں پاکستان میں پروفیسر کے خلاف کاروائی نہیں کی جا سکتی۔ استدعا میں عدالت صوبائی محتسب کے فیصلے کو کالعدم قرار دے اور لمز کے پروفیسر کے خلاف  وویمن پروٹیکشن ایکٹ کے تحت کاروائی کرنے کا حکم دے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں